’ملک کی سیکیورٹی اور استحکام اتنا کمزور نہیں ایک کتاب سے اس کو فرق پڑے‘

اسلام آباد ہائیکورٹ نے سابق امریکی سیکرٹری آف اسٹیٹ ہنری کسنجر کے 1971 سے متعلق انکشافات پر تحقیقات کی درخواست ناقابل سماعت قرار دیتے ہوئے خارج کردی۔

اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ایک شہری ملک مشتاق احمد کی درخواست پر سماعت کی۔

درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا تھا کہ سابق امریکی سیکرٹری آف اسٹیٹ ہنری کسنجر نے اپنی کتاب میں 1971ء کے سانحہ سے متعلق انکشافات کیے جس کی تحقیقات کے لیے وزیراعظم عمران خان کو درخواست دی مگر کوئی جواب نہ ملا۔

عدالت نے درخواست گزار سے استفسار کیا کہ کیا آپ نے حمود الرحمن کمیشن کی رپورٹ پڑھی ہے؟

عدالت نے تحریری حکم نامہ میں کہا کہ پارلیمنٹ اور ایگزیکٹو کے ملکی سیکیورٹی و استحکام کے حوالے سے اقدامات پر عدالت کو کوئی شک و شبہ نہیں، پاکستان کی سیکیورٹی اور استحکام نہ کمزور ہے، نہ ہی عدالت کو مداخلت کی ضرورت ہے۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے، ہمارے ملک کی سیکیورٹی اور استحکام اتنا کمزور نہیں ہے کہ ایک کتاب سے اس کو فرق پڑے۔

عدالت نے کہا کہ سابق سیکرٹری اسٹیٹ کے بیانات سے پٹیشنر کے کون سے حقوق متاثر ہوئے، وہ عدالت کو مطمئن نہ کرسکے جبکہ ہائیکورٹ کے بجائے دوسرے فورم موجود ہیں جہاں اس قسم کے معاملات اٹھائے جاسکتے ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو