جہاں سے منشیات ملے گی، وہاں کے ایس ایچ او کیخلاف بھی مقدمہ ہوگا،اعجاز شاہ

وفاقی وزیر انسداد منشیات بریگیڈیئر ریٹائرڈ اعجاز شاہ کا کہنا ہےکہ ان کی صحت ٹھیک نہیں رہتی، نسبتاً نرم وزارت کی درخواست کی تھی جو وزیراعظم نے قبول کرکے احسان کیا۔

ننکانہ صاحب میں ایک خطاب کرتے ہوئے اعجاز شاہ نےکہاکہ وہ آئندہ پیرکو وزارت کا چارج سنبھالیں گے اورکام کا آغاز اپنے ضلع ننکانہ سے کریں گے۔

اعجاز شاہ کا کہنا تھا کہ وہ پہلے بھی نارکوٹکس کی وزارت میں کام کر چکے ہیں، وزیر اعظم سے پولیس کے خلاف کارروائی کی منظوری لے لی ہے، جہاں سے منشیات ملے گی، وہاں کے اسٹیشن ہاؤس آفیسر (ایس ایچ او) کے خلاف بھی پرچہ درج ہوگا۔

وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ نشہ کرنے والے تو مریض ہوتے ہیں اصل مجرم تو منشیات فروش ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ پاکستان میں کورونا سے اموات کی تعداد یومیہ 89 تک جاچکی ہے، میں بھی پچھلے مہینے ویکسین لگوا کر ٹرائل میں شامل ہوا، ابھی مثبت اثرات ہیں، صحت ٹھیک نہ رہنے کی وجہ سے چھوٹی وزارت کی درخواست کی تھی جسے وزیراعظم نے قبول کرلیا۔

خیال رہے کہ گذشتہ روز وزیراعظم نے وفاقی کابینہ میں رد و بدل کرتے ہوئے وزیر ریلوے شیخ رشید سے وزارت ریلوے کا قلمدان واپس لے کر انہیں وفاقی وزیر داخلہ کا قلمدان سونپا تھا اور وفاقی وزیر داخلہ اعجاز شاہ کا قلمدان تبدیل کرکے انہیں وزیر انسداد و منشیات بنایا گیا ہے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو