پی ڈی ایم بڑے فیصلے کرنے جارہی ہے، 8 دسمبر کے اجلاس میں آر یا پار ہوگا، مریم نواز

مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز کا کہنا ہےکہ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) بڑے فیصلےبکرنے جارہی ہے، 8 دسمبر کے اجلاس کے بعد آر ہوگا یا پار ہوگا۔

لاہور میں مسلم لیگ ن کے سوشل میڈیا کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے مریم نواز نے ارکان قومی و صوبائی اسمبلی کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ اگر استعفوں کا آپشن استعمال کیا تو ساتھ دینا ہوگا، کسی کے دباؤ میں نہیں آنا جو دباؤ میں آکر پارٹی کے خلاف گیا، عوام اس کے گھروں کا گھیراؤ کریں گے۔

مریم نواز کا کہنا تھا کہ پاکستان کے عوام یہ جنگ جیت چکے ہیں، لاہور میں 13 دسمبر کے جلسے میں فتح کا اعلان ہونا باقی ہے، ممبران اسمبلی تیار رہیں، لاہور جلسے کی تیاری کے لیے جتنی ایف آئی آر کٹیں، انہیں گلے میں ہار بنا کر پہن لیں، پتا چلے یہ حکومت کتنی ڈری ہوئی ہے۔

مریم نواز نے وزیراعظم کو ’تابعدار خان‘ کا خطاب دے دیا

لیگی نائب صدر نے وزیر اعظم عمران خان کو تابعدار خان کا خطاب دیتے ہوئے کہا کہ عمران خان کا نام آج سے تابعدار خان رکھ دینا چاہیے، آج کل چور، ڈاکو کو ایماندار اور تابعدار کہا جاتا ہے، یہ بندہ ایماندار بھی ہے اور تابعدار بھی ہے، کسی نے ملک کی لاکھ خدمت کی ہو لیکن تابعدار نہ ہو تو وہ فارغ ہے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان دعویٰ کرتے تھے کہ پوری دنیا میں سبز پاسپورٹ کی عزت ہوگی لیکن ہماری تو بیرون ملک پروازیں ہی بند ہوگئیں، کوئی ہے جو وزیراعظم سے ان کے دعوؤں کے متعلق پوچھے۔

نائب صدر ن لیگ کا کہنا تھا کہ ایل این جی کی تاخیر سے درآمد پر وزیراعظم کا کچن چلانے والے دوستوں کو فائدہ پہنچایا گیا، ایل این جی اس لیے دیر سے منگوائی کیوں کہ ان کے دوستوں کے فرنس آئل پلانٹ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ جب روٹی 30 روپے کی ہوگی تو ایک گھر کیسے گزارہ کرے گا؟ گیس آ نہیں رہی لیکن بل بڑے بڑے آ رہے ہیں، آج ادویات کئی گنا مہنگی ہو گئیں لیکن کسی کو کوئی تکلیف نہیں کیونکہ بندہ تابعدار ہے، یہ حکومت گھر جائے گی تو ملک چلے گا، منہگائی ختم ہوگی۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو