فرانس میں صدر کے خلاف پُرتشدد مظاہرے، مارکیٹوں پر حملے اور گاڑیاں نذرِ آتش

فرانس میں داخلی سلامتی کے لیے بنائے گئے قوانین کے خلاف پُرتشدد مظاہرے پھوٹ پڑے ہیں۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق ہفتے کو ہزاروں افراد حکومتی قوانین کے خلاف سڑکوں پر نکل آئے جن کا کئی مقامات پر پولیس سے تصادم ہوا۔ مشتعل مظاہرین نے پولیس تشدد کے خلاف مظاہروں میں متعدد دکانوں میں توڑ پھوڑ کی جب کہ کئی گاڑیوں کو آگ بھی لگا دی۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے کی جاری کردہ تفصیلات میں بتایا گیا ہے کہ پیرس کی مرکزی شاہراہ پر ہزاروں افراد مظاہرے کے لیے نکلے۔ ان میں زیادہ تر افراد نے سیاہ لباس پہن رکھا تھا اور ان کے منہ پر نقاب تھے۔ مظاہرین فرانسیسی پولیس کی پُرتشدد کارروائیوں اور صدر میکخواں کی سیکیورٹی پالیسی کے خلاف شدید نعرے بازی کررہے تھے۔

مظاہرین میں شامل کئی افراد بینر اٹھائے ہوئے تھے اور کئی افراد کے پاس ہتھوڑے بھی تھے، جن سے پولیس کے ساتھ تصادم شروع ہونے کے بعد انہوں نے توڑ پھوڑ کی۔

مظاہرین کو قابو کرنے کے لیے پولیس نے آنسو گیس کا بے دریغ استعمال کیا۔ مشتعل مظاہرین نے متعدد دکانوں میں توڑ پھوڑ کی اور کئی گاڑیوں اور املاک کو آگ لگا دی۔

واضح رہے کہ فرانس میں صدر میکخواں کی جانب سے پولیس کو تحفظ فراہم کرنے کے لیے متعارف کردہ قوانین کے خلاف احتجاجی لہر شدت اختیار کرتی جارہی ہے۔

حال ہی میں فرانسیسی پارلیمنٹ میں پیش کردہ اس قانون میں پولیس اہل کاروں کی تصاویر سوشل میڈٰیا پر شیئر کرنے یا پھیلانے سے متعلق پابندیاں متعارف کروائی گئی ہیں اور ان پابندیوں کا مقصد پولیس اہل کاروں کا تحفظ بتایا جاتا ہے۔

دوسری جانب ان قوانین کو شخصی آزادیوں کے خلاف حملہ قرار دینے والے مظاہرین کا کہنا ہے کہ صدر میکخواں اور ان کی حکومت دوسروں کو تو آزادی اظہار کا پرچار کرتے ہیں لیکن اپنے ملک میں اس پر قدغنیں لگا رہے ہیں۔

مظاہرین کا کہنا ہے کہ قانون کے نفاذ کی آڑ میں آئے دن پولیس سفاکی کا مظاہرہ کرتی ہے۔ گزشتہ ماہ ایک سیاہ فام موسیقار مائکل زیکلر کو پولیس نے نسلی منافرت اور تشدد کا نشانہ بنایا جس کی سی سی ٹی وی فوٹیج عام ہونے کے بعد پولیس کے خلاف مظاہروں اور احتجاج کی پُرتشدد نئی لہر نے جنم لیا۔

صدر میکخواں کی حکومت کی پالیسیوں کے خلاف فرانس میں بے چینی بڑھتی جارہی ہے۔ میکخواں اور ان کی حکومت مسلم آبادی کے خلاف امتیازی کارروائیوں، قانون سازی اور بیان بازی کی وجہ سے پہلے ہی تنقید کی زد میں ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو