امارات نے ویزا پابندی جلد ہٹانے کی یقین دہانی کرائی ہے، شاہ محمود قریشی

وزیرخارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ متحدہ عرب امارات (یو اے ای) نےکہا ہے کہ ویزا پابندی صرف پاکستان کے لیے نہیں اس میں دیگر ممالک بھی شامل ہیں، پروٹوکول بنائے جارہے ہیں جلد ویزا اجراء شروع ہو جائےگا۔

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ یو اے ای نے وضاحت کی ہے کہ جو ویزے جاری ہوچکے ہیں وہ منسوخ نہیں کررہے اور ویزوں پر پابندی زیادہ دیر نہیں رہے گی، جلد اٹھالی جائے گی۔

ان کا کہنا تھا کہ یو اے ای نے ہم سے سیکیورٹی سے متعلق کوئی بات نہیں کی ہے۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ اسرائیل سے متعلق ہم پر کوئی دباؤ نہیں، آج بھی وہی تاریخی مؤقف ہے. جب کہ سعودی عرب سے معاملات بالکل ٹھیک ہیں، آج ہی پیش رفت ہوئی ہے اور سعودی عرب نے نئی ڈیجیٹل کوآپریشن آرگنائزیشن لانچ کی ہے. جس میں 5 سے 6 ممالک کو دعوت دی گئی جس میں پاکستان بھی شامل ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) اجلاس کے ایجنڈے میں کشمیر شامل نہ ہونے کی خبر غلط ہے، بھارت قیاس آرائیاں کررہا ہے ، بھارتی میڈیا حقائق کے برعکس معاملہ اچھال رہا ہے، او آئی سی کا مؤقف جو کشمیر پر پہلے تھا، اب بھی وہی ہے. بھارت کو ناکامی ہوگی۔

انہوں نے مزید کہا کہ ہماری درخواست پر او آئی سی نے خصوصی وفد کمشیر بھیجا، ہم نے اجازت دی ،بھارت نے اجازت نہیں دی، خصوصی وفد نے کشمیر سے متعلق اپنی رپورٹ مرتب کرلی ہے جو کل کے اجلاس میں پیش ہوگی، او آئی سی سے توقع ہے کہ مسئلہ کشمیر پر دو ٹوک مؤقف آئے گا۔

خیال رہے کہ گذشتہ ہفتے متحدہ عرب امارات نے پاکستان سمیت 11 ممالک کے مسافروں کےلیے ویزوں کے اجراء کو روک دیا تھا۔

اس حوالے سے پاکستانی دفتر خارجہ کے ترجمان کا کہنا تھا کہ متحدہ عرب امارات کا یہ اقدام ممکنہ طور پر کورونا کی دوسری لہر کے باعث ہے جب کہ آج ہفتہ وار میڈیا بریفنگ میں ترجمان نے کہا ہےکہ متحدہ عرب امارات نے پاکستان کے لیے ویزا پالیسی میں تبدیلیوں سے مطلع نہیں کیا۔

دوسری طرف سوشل میڈیا پر ٹویٹ کرتے ہوئے معاون خصوصی برائے سمندر پار پاکستانی ذلفی بخاری نے کہا کہ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کے لیے مسلسل حمایت پر نصر بن ثانی الحملی کا شکرگزارہوں، میڈیا رپورٹس کے برخلاف نصر بن ثانی الحملی نے کہا کہ پاکستانی افرادی قوت کی برآمد پر کوئی پابندی نہیں۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی ذلفی بخاری نے کہا کہ بیرون ملک مقیم پاکستانیوں کے لیے مسلسل حمایت پرنصر بن ثانی الحملی کاشکرگزارہوں۔ میڈیا رپورٹس کے برخلاف انہوں نے کہا کہ پاکستانی افرادی قوت کی برآمد پر کوئی پابندی نہیں۔

ذلفی بخاری نے کہا کہ پاکستانی ورکرز کی تعداد میں 11 فیصد اضافہ ہوا ہے، کوروناکےدوران نکالے گئےورکرز میں پاکستانی بھی شامل ہیں، ان پاکستانیوں کو ورچوئل لیبر مارکیٹ ڈیٹابیس پر رجسٹر کرکے فوقیت دی گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ دس سال کی گولڈن ویزا درخواستوں کی بھی حوصلہ افزائی کی گئی، متحدہ عرب امارات کی قیادت کےساتھ اپنے ‘ڈاسپورا’ کے مسائل حل کرنے کے لیے باہمی تعاون کے منتظر ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو