اداروں سے تصادم کا کوئی تصور نہیں، استحکام کے قائل ہیں: فضل الرحمان

اپوزیشن اتحاد پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) اور جمعیت علمائے اسلام (جے یو آئی) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا ہے کہ استحکام کے قائل ہیں، اداروں سے تصادم کا کوئی تصور نہیں۔

لاہور میں میڈیا سے گفتگو میں مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ 16 اکتوبر کو گوجرانوالہ میں جلسہ ہوگا جس کو کامیاب بنانے کی بھرپور کوشش کی جائے گی اور عوامی قوت کا مظاہرہ کیاجائے گا۔

انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت نالائق ہے، اسے عوامی نمائندہ حکومت نہیں کہا جاسکتا، اسلام آباد میں ملازمین کا احتجاج جاری ہے، ہم ان کے مطالبات کی حمایت کرتے ہیں۔

سربراہ جے یو آئی کا کہنا تھا کہ آزادی کا کاروان چل پڑا ہے، پی ڈی ایم کی جانب سے پورے ملک میں جلسوں کا سلسلہ شروع کیا جا رہا ہے، دو تین جلسوں میں ملک میں تبدیلی کے آثار پیدا ہوجائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ یہ تاثر غلط ہے کہ سیاسی لوگ اداروں سے تصادم چاہتے ہیں، ہم استحکام کے قائل ہیں، ہمیں ٹھنڈے دل سے سوچنا چاہیے کہ ملک کیسے چل سکتا ہے؟

مولانا فضل الرحمان کا کہنا تھا کہ غداری کا مقدمہ اس نے کیا ہے جو خود غدار ہیں، اس قسم کے ایجنڈے استعمال کرتے ہیں تو کیا آپ انڈین ایجنٹ نہیں بنتے؟… ایسے مقدمات کو جوتے کی نوک پر رکھتےہیں، عمران خان کے پسینے چھوٹے ہوئے ہیں، ہم مقابلہ کریں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسلام آباد جانا ہماری پلاننگ میں ہے، اسمبلیوں سے استعفے متفقہ آپشن کا حصہ ہے، اس کا امکان رد نہیں کیا جاسکتا، ن لیگ اور پی پی کی قیادت کو پیغام دینا چاہتے ہیں کہ سڑکوں پر عوام میں اپنی کمی محسوس نہیں ہونے دیں۔

خیال رہے کہ اپوزیشن جماعتوں کے اتحاد پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ نے حکومت مخالف تحریک کا اعلان کررکھا ہے اور اس حوالے سے پہلا جلسہ 16 اکتوبر کو پنجاب کے شہر گوجرانوالہ میں ہوگا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو