اسلحہ سازی میں ترک کمپنیاں سب سے آگے

امریکی جریدہ ڈیفنس نیوز (Defense News) ہر سال دنیا کی سو بڑی اسلحہ ساز کمپنیوں (top 100 defense companies) کی فہرست جاری کرتا ہے۔ اس کی تازہ فہرست میں 7 ترک کمپنیاں بھی جگہ بنانے میں کامیاب ہوگئی ہیں۔ ترکی اسلحہ سازی میں دنیا کے چند بڑے ترقیاتی یافتہ ممالک کی صف میں شامل ہو چکا ہے۔

گزشتہ برس کی فہرست میں ترکی کی پانچ کمپنیوں کو شامل کیا گیا تھا۔ اس بار مزید 2 کو جگہ دی گئی ہے۔ ترک کمپنی اسيلسان (ASELSAN) کو سو بڑی کمپنیوں میں 48 ویں نمبر پر رکھا گیا، گزشتہ برس یہ 52 ویں نمبر پر تھی۔ عالمی درجہ بندی میں شامل ہونے والی یہ پہلی ترک کمپنی ہے، جو 2006ء میں 93 ویں نمبر پر تھی۔ اس کمپنی کی سالانہ آمدن 2 ارب 172 ملين ڈالر ہے۔ مذکورہ کمپنی ریڈار سمیت ہر قسم کا جدید اسلحہ تیار کرتی ہے۔ فضائی ہتھیار بنانے والی ترک کمپنی توساش (TUSASH) اس فہرست میں 53 ویں نمبر پر ہے۔ توساش طیارے، ہیلی کاپٹرز (اتاک، عنقا، غوک بائی) وغیرہ بناتی ہے۔ اس کی سالانہ آمدن ایک ارب 858 ملين ڈالر ہے۔

اس کے علاوہ ترک اسلحہ ساز کمپنی BMC کو بھی پہلی بار اس فہرست میں شامل کیا گیا ہے۔ یہ کمپنی جدید ٹینک اور بکتر بند بناتی ہے۔ اس کی سالانہ آمدن 533 ملين ڈالر ہے۔ علاوہ ازیں ترک کمپنیاں روكتسان (ROKETSAN)، ایس ٹی ایم (STM)، ایف این ایس ایس (FNSS) اور ہافلسان (HAVELSAN) کو بھی دنیا کی سو بڑی اسلحہ ساز کمپنیوں کی فہرست میں شامل کیا گیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق ترکی نے جدید اسلحہ سازی میں گزشتہ چند برسوں کے دوران بے پناہ ترقی کی ہے اور اس فہرست میں جگہ پانے والا واحد مسلم ملک ہے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو