نیشنل پارٹی کے رہنما سینیٹر میر حاصل بزنجو انتقال کرگئے

کوئٹہ: نیشنل پارٹی کے رہنما سینیٹر میر حاصل خان بزنجو انتقال کرگئے۔

ترجمان نیشنل پارٹی جان بلیدی کے مطابق میر حاصل بزنجو وفاقی وزیر بھِی رہے تھے. وہ گذشتہ کچھ مہینوں سے پھیپھڑوں کے سرطان میں مبتلا تھے۔

جان بلیدی نے بتایا کہ حاصل خان بزنجو کو آج طبیعت کی خرابی کے باعث نجی اسپتال میں داخل کیا گیا تھا، جہاں ان کا انتقال ہوگیا۔

نیشنل پارٹی کے رہنما میر حاصل بزنجو کو کل خضدار میں سپرد خاک کیا جائے گا، میت خضدار میں ان کے آبائی گاؤں نال لے جائی جائے گی، نماز جنازہ کل شام 5 بجے نال میں ہی ادا کی جائے گی۔

ترجمان نیشنل پارٹی کے مطابق حاصل بزنجو کی میت کل صبح کراچی سے لے کرروانہ ہوں گے، میر حاصل بزنجو کا ایک بیٹا اور ایک بیٹی ہے، دونوں اسپتال پہنچ گئے ہیں۔

سیاسی رہنماؤں کی تعزیت

سینیٹرحاصل بزنجو کے انتقال پرسیاستی رہنماؤں کی تعزیت و اظہارخیال کا سلسلہ جاری ہے۔

سینیٹر پرویز رشید کا کہنا ہے کہ حاصل بزنجو نے ہزاروں شمعیں روشن کیں، حاصل بزنجو ایک شخصیت کا نہیں ایک دور کا نام ہے۔

شیری رحمان کا کہنا ہے کہ حاصل بزنجو صرف بلوچستان میں نہیں پورے ملک میں قد آور شخص تھے، ان کے بغیر ملک کی سیاست نامکمل ہے، حاصل بزنجو نے کبھی اپنے اصولوں پر سمجھوتہ نہیں کیا۔

رضا ربانی نے کہا کہ حاصل بزنجو کی پوری زندگی صوبائی خودمختاری کی جدوجہد میں گزری، حاصل بزنجو جیسا ایماندار سیاستدان پاکستان میں نہیں ہوگا۔

عبدالمالک بلوچ نے اپنے تعزیتی بیان میں کہا کہ میر حاصل بزنجو ایک قوم پرست اور جمہوریت پسند انسان تھے، حاصل بزنجو کئی بار جمہوریت کی خاطر جیلوں میں گئے، حاصل بزنجو کی تمام تر زندگی جدوجہد میں گزری، وہ انتہائی ایماندار اور نڈر انسان تھے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو