پولیس انسپکٹرز کی سینیارٹی لسٹ میں غیرقانونی ترقیاں پانے والے واپس جونیئر ہوگئے

سندھ میں پولیس انسپکٹرز کی سینیارٹی لسٹ میں غیرقانونی ترقیاں پانے والے واپس دوبارہ جونیئر ہوگئے۔

سندھ پولیس کے انسپکٹرز کی سینیارٹی لسٹ میں جونیئرز کو سینیئر کردیا گیا تھا جس پر میڈیا نے انسپکٹرز کی سینیارٹی لسٹ میں بے قاعدگیوں کی نشاندہی کی تھی۔

پولیس رولز کی خلاف ورزی کرتے ہوئے من پسند افراد کو سینیارٹی دیدی گئی تھی اور درجنوں ایسے افسران فہرست میں شامل تھے جنہیں ترقی پہلے مل گئی اور ترقی کے لیے ضروری کورس بعد میں کیا۔

انسپکٹر جنرل (آئی جی) پولیس سندھ نے جیو نیوزکی خبرپرتمام پولیس رینج میں تحقیقاتی کمیٹیاں قائم کی تھیں تاہم ڈی آئی جی امین یوسفزئی کی سربراہی میں کراچی رینج کی کمیٹی نے رپورٹ تیار کرلی ہے۔

رپورٹ کے مطابق کمیٹی نے غیرقانونی ترقی پانے والے 97 افسران سے متعلق تحقیقات کیں اور تحقیقات کے دوران تمام افسران کی ترقیاں غیرقانونی پائی گئیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ غیرقانونی ترقی پانے والے سینیارٹی لسٹ میں اپنے سینیئرز سے آگے نکل گئے تھے جس پر کمیٹی نے تمام 97 افسران کی ترقیاں غلط قرار دے کر اصل سینیارٹی پر بھیج دیا جب کہ 97 افسران کی غیرقانونی ترقیاں کالعدم ہونے سے 1800 انسپکٹرز کو فائدہ ہوا ہے۔

رپورٹ کے مطابق 7 افسران نے اپنی ترقی سے متعلق دستاویزات کمیٹی کو پیش نہیں کیں جس پر ان افسران کی سینیارٹی بھی روک دی گئی ہے۔

اس کے علاوہ حیدرآباد، میرپورخاص اور سکھر رینج نے اپنی تحقیقات تاحال مکمل نہیں کیں جب کہ شہید بینظیر آباد اور لاڑکانہ رینج میں بھی غیرقانونی ترقیوں پر کمیٹیوں نے کام شروع نہیں کیا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

مینو