اسرائیل کے غزہ پر مسلسل پانچویں روز بھی فضائی حملے

اسرائیل کی جانب سے غزہ پر مسلسل پانچویں روز بھی فضائی حملے کیے گئے ہیں جس میں متعدد افراد کے زخمی ہونے کی اطلاعات ہیں۔

اسرائیلی وزارت دفاع نے تازہ ترین حملوں کی تصدیق کرتے ہوئے دعویٰ کیا ہے کہ ان حملوں میں حماس کے مراکز کو نشانہ بنایا گیا اور یہ حملے غزہ سے راکٹ حملوں اور ہیلیئم گیس کے غبارے اسرائیلی حدود میں بھیجنے کے ردعمل میں کیے گئے ہیں۔

دوسری جانب اسرائیل اور غزہ کی سرحدی باڑ پر کشیدگی میں ایک بار پھر اضافہ ہورہا ہے محاصرے کے خلاف فلسطینی شہریوں کی جانب سے مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے۔

غزہ کی وزارت صحت حکام کے مطابق اسرائیل کی جانب سے سرحد پر مظاہرہ کرنے والے نہتے شہریوں پر فائرنگ کی گئی جس کے نتیجے میں 4 فلسطینی نوجوان شدید زخمی ہوگئے۔

حماس کی جانب سے اسرائیلی جارحیت کی مذمت کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ اسرائیلی جرائم کی سیاہ تاریخ میں مزید جرائم کا اضافہ ہورہا ہے، جس سے فلسطینیوں کے عزائم میں کوئی کمی نہیں آئے گی۔

حماس کا کہنا ہے کہ فلسطینی عوام غزہ کے 14 سال سے جاری غیر قانونی محاصرے کو ہر صورت ختم کرکے رہیں گے تاکہ وہ معمول کی زندگی بسر کرسکیں۔

واضح رہے کہ اسرائیل نے 20 لاکھ سے زائد آبادی پر مشتمل غزہ کا 2007ء سے زمینی، بحری اور فضائی محاصرہ کر رکھا ہے، جس کے باعث غزہ کے عوام کو خوراک اور ادویات سمیت انتہائی بنیادی اشیائے ضرورت کی شدید قلت کا سامنا بھی ہے۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو