اکنامک ٹیررازم کا بل اسی حالت میں منظور ہوا تو ہر شہری کا جینا دشوار ہوجائیگا

پاکستان پیپلزپارٹی کے رہنما رضا ربانی نے کہا ہے کہ اکنامک ٹیرر ازم کا مجوزہ قانون اسی حالت میں منظور کیا گیا تو ہر شہری کا جینا دشوار ہوجائے گا۔

پیپلز پارٹی کی سینٹرل ایگزیکٹیو کمیٹی (سی ای سی) کا اجلاس چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کی زیر صدارت ہوا جس میں ملکی سیاسی صورتحال اور قانون سازی پر غور کیا گیا۔

اجلاس کے بعد پیپلز پارٹی کے مرکزی رہنماؤں رضا ربانی، شیری رحمان اور لطیف کھوسہ نے پریس کانفرنس کی۔

سینیٹر رضا ربانی کا کہنا تھا کہ سی ای سی اجلاس میں گلگت بلتستان کے الیکشن اور فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) پر بات ہوئی، گلگت بلتستان میں الیکشن ملتوی کیے گئے لیکن اب کورٹ کے حکم پر دوبارہ تین ماہ میں انتخابات ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ نوید قمر نے فنانشل ایکشن ٹاسک فورس (ایف اے ٹی ایف) قوانین پر بریفنگ دی، ان کا کہنا تھا کہ وفاق کو پہلے پتہ تھا، پر جان بوجھ کر پارلیمنٹ میں بل دیر سے لایا گیا، حکومت ایسی شقیں ڈال رہی ہے جس سے عام آدمی کے حقوق متاثر ہوں اور ہر شخص کو خوف میں زندگی گزارنے جیسے قوانین بنائے جارہے ہیں۔

رضا ربانی کا کہنا تھا کہ اپوزیشن عوام کے حقوق پامال ہونے نہیں دے گی، اکنامک ٹیرزازم پر بنائے جانے والے قانون سے ہر آدمی اس قانون کی زد میں آئے گا، اگر یہ قانون اسی حالت میں آیا تو ہر انسان کا جینا دشوار ہو جائے گا لیکن پیپلز پارٹی دیگر اپوزیشن جماعتوں سے مل کر ان قوانین کا ڈٹ کر مقابلہ کرے گی۔

ان کا کہنا ہے کہ ہم ہمیشہ نیب سے متاثر رہے ہیں، نیب کے ذریعے پیپلز پارٹی پیٹریاٹس بنی، ہیومن رائٹس واچ نے نیب کو ایکسپوز کیا ہے اور نیب سے متعلق سپریم کورٹ کے فیصلے نے ادارے کی قلعی کھول دی ہے۔

انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے کارکن چاہتے ہیں کہ 17 اگست کو آصف زرداری پیش ہوں تو کارکن جمع ہوں لیکن آصف زرداری نے نیب پیشی کے وقت کارکنوں کو کورٹ کے باہر جمع ہونے سے منع کر دیا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو