افغان سیکیورٹی فورس کے 13 اہلکار طالبان کے حملے میں ہلاک، متعدد زخمی

افغانستان میں طالبان جنگجوؤں نے فوجی چیک پوسٹ پر دھاوا بول دیا جس کے نتیجے میں 13 اہلکار اور متعدد زخمی ہوگئے۔

افغان میڈیا کے مطابق صوبے بدغیث کے فوجی چیک پوسٹ پر طالبان جنگجوؤں نے حملہ کردیا، سیکیورٹی اہلکاروں نے ایک گھنٹے تک سخت مزاحمت کی لیکن چند اہلکاروں کے جنگجوؤں سے جا ملنے پر سیکیورٹی اہلکار پسپا ہوگئے۔

ترجمان گورنر بدغیث نے بتایا کہ دو طرفہ فائرنگ کے نتیجے میں سیکیورٹی فورسز کے 13 اہلکار ہلاک اور متعدد زخمی ہوگئے جب کہ جنگجوؤں نے اسلحہ اور فوجی گاڑیاں قبضے میں لیکر چیک پوسٹ پر قبضہ کرلیا۔ سیکیورٹی فورسز کے چند اہلکاروں نے طالبان میں شمولیت اختیار کرلی۔

ایک ہفتے کے دوران صوبے تخار، قندھار، لوگار، سرپل، بلخ اور بدغیث کی چیک پوسٹوں پر طالبان حملوں میں ہلاک ہونے والے افغان سیکیورٹی اہلکاروں کی تعداد 100 سے تجاوز کرگئی ہے۔ جب کہ صرف صوبے بدغیث میں 13 مرتبہ حملہ کیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ 29 فروری کو افغان طالبان اور امریکا کے درمیان طے پانے والے امن معاہدے کے باوجود تاحال افغانستان میں امن قائم نہیں ہوسکا ہے جس کا ذمہ دار طالبان نے اقتدار کے لیے لڑتے افغان قیادت کو قرار دیا جب کہ صدر اشرف غنی نے اس کی ذمہ داری طالبان پر عائد کی۔

صدر اشرف غنی نے طالبان کع رمضان کے مہینے میں حملے روکنے کا پیغام دیا، جس کو طالبان کے ترجمان نے مسترد کر دیا کہ ایسا ممکن نہیں.

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

تبصرہ کرنے سے پہلے آپ کا لاگ ان ہونا ضروری ہے۔

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو