کورونا وائرس کے مریضوں کیلئے دبئی میں محفوظ طریقہ

دُنیا بھر میں کورونا کی وبا 25 لاکھ سے زائد افراد کو اپنی لپیٹ میں لے چکی ہے۔ جبکہ دو لاکھ کے قریب مریض موت کے منہ میں بھی جا چکے ہیں۔ کورونا ایک ایسا خطرناک وائرس ہے جو مریضوں کا علاج کرنے والے ڈاکٹروں اور طبی عملے کی موت کا بھی سبب بن رہا ہے۔اس کے باوجود پُرعزم طبی عملہ اپنے فرائض کی انجام دہی میں کوئی کوتاہی نہیں برت رہا۔

متحدہ عرب امارات میں طبی عملے میں کورونا کی منتقلی روکنے کے لیے خصوصی سہولت متعارف کرا دی گئی ہے۔ متحدہ عرب امارات کی دبئی کارپوریشن برائے ایمبولینس سروسز نے اعلان کیا ہے کہ کورونا وائرس کے مشتبہ مریضوں کو ہسپتال منتقل کرنے کے لئے آئسولیشن کیپسول بیڈز استعمال کئے جائیں گے۔

العربیہ نیوز کے مطابق ایمبولینس سروسز کارپوریشن کے ایگزیکیٹو ڈائریکٹر خلیفہ الداری نے بتایا کہ کیپسول ایک ایسے بیڈ پر مشتمل ہے جس کے ذریعے سے بیمار شخص کے ہسپتال منتقل ہونے کے دوران انفیکشن کو طبی عملے تک پہنچنے کو موثر طریقے سے روکنا ممکن ہے۔

دبئی کے طبی عملے کی حفاظت کے لئے کورونا کے مریضوں کی ہسپتال منتقلی کے لئے خصوصی پریشر کیپسول بیڈز فراہم کئے گئے ہیں جن سے وائرس کی ترسیل کے امکانات انتہائی کم ہوجاتے ہیں۔
اس ”نیگیٹو پریشر آئسولیشن شٹل“میں مریض کو آکسیجن کی فراہمی کے لئے دو جگہیں مخصوص کر رکھی ہیں۔ مریض کو ہسپتال منتقل کرنے کے ذمہ دار طبی عملے کو مریض کی مدد کے لئے خصوصی سوراخ فراہم کئے گئے ہیں جن کی مدد سے وہ پریشر سیل کو متاثر کئے بغیر اپنا کام کر سکتے ہیں۔

جبکہ ہر مریض کی منتقلی کے بعد ایمبولینس کو ڈس انفیکٹ کرنے سے بھی نجات مل جاتی ہے۔ اماراتی وزارت صحت کی جانب سے جاری بیان کے مطابق ملک میں گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کورونا وائرس کے مزید 483 کیسز رپورٹ ہوئے ہیں۔

وزارت کے بیان کے مطابق امارات میں 24 گھنٹوں کے دوران 103 مزید مریض کرونا وائرس کو شکست دینے میں کامیاب بھی رہے ہیں۔جس کے بعدکورونا سے صحت یاب ہونے والے مریضوں کی گنتی 1500 سے زائد ہو چکی ہے۔ وزارت صحت کا مزید بتانا ہے کہ امارات میں وائرس کا شکار ہو کر جاں بحق ہونے والوں کی تعداد 52 ہے۔ بتایا امارات میں کرونا وائرس کے کل کیسز کی تعداد 8238 ہو چکی ہے.

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

تبصرہ کرنے سے پہلے آپ کا لاگ ان ہونا ضروری ہے۔

اسی طرح کی مزید پوسٹس

مینو