متحدہ عرب امارات کی تمام بینکوں کو خصوصی ہدایات، اماراتی ویزہ رکھنے والوں کیلئے بڑی رعایت

متحدہ عرب امارات کے مرکزی بینک کی جانب سے مملکت بھر کے تمام بینکوں کو ہدایت کی گئی ہے کہ وہ اپنے ان تمام غیر ملکی اکاؤنٹ ہولڈرز کی تمام ٹرانزیکشن کرنے کے بھی پابند ہوں گے جن کے ویزہ، انٹری پرمٹس اور اماراتی شناختی کارڈز کی مُدت ختم ہو چکی ہے۔

مرکزی بینک کی جانب سے جاری کردہ ایک نوٹیفکیشن کے مطابق امارات میں مقیم ایسے تمام تارکین وطن جن کے ویزہ، انٹری پرمٹس اور اماراتی شناختی کارڈز کی مُدت یکم مارچ 2020کے بعد ختم ہوگئی ہے، وہ ان زائد المیعاد (ایکسپائرڈ) دستاویزات پر بھی بینکوں سے ٹرانزیکشن کروا سکتے ہیں۔

غیر مُلکی افراد کیلئے یہ خصوصی رعایت یکم مارچ سے لے کر 31 دسمبر 2020ء تک کیلئے دی گئی ہے، حتیٰ کہ وہ تارکین وطن جو اس وقت امارات سے باہر موجود ہیں، وہ بھی اپنی زائد المیعاد اماراتی دستاویزات کی مدد سے اماراتی بینکوں سے ٹرانزیکشن کروا سکیں گے۔

اس خصوصی رعایت کے فیصلے کی منظوری رواں ماہ کے دوران وفاقی کابینہ کے اجلاس کے دوران دی گئی تھی۔

مرکزی بینک کے اس نوٹیفکیشن میں واضح کیا گیا ہے کہ تمام بینک اور مالیاتی ادارے اس فیصلے پر عمل درآمد کے پابند ہوں گے۔ تمام بینکوں کو تارکین وطن کی ایکسپائرڈ اماراتی دستاویزات کو یکم مارچ سے 31 دسمبر 2020ء تک کارآمد سمجھ کر ٹرانزیکشن کو یقینی بنانا ہوگا۔

اس فیصلے کا مقصد امارات میں کورونا وائرس کی وبا کے باعث پیدا ہونے والی سنگین معاشی صورت حال ہے، لاک ڈاؤن کے باعث لوگوں کی نقل و حرکت ختم کر دی گئی ہے۔

واضح رہے کہ 14 اپریل 2020ء کو فیڈرل اتھارٹی فار اآئیڈنٹٹی اینڈ سٹیزن شپ کے ترجمان کرنل خامس الکعبی نے اعلان کیا تھا کہ یکم مارچ سے 31 دسمبر 2020ء کے دوران جن غیر مُلکیوں کے ویزہ اور انٹری پرمٹس کی مُدت ختم ہو رہی ہے، انہیں سال کے آخری دن تک کارآمد تصور کیاجائے گا۔ یہ رعایت ان غیر مُلکیوں کے لیے بھی ہوگی، جو اس وقت امارات سے باہر مقیم ہیں۔

تارکین وطن کو یہ خصوصی رعایت تمام انٹری پرمٹس پر دی جا رہی ہے، جن میں سیاحتی ویزہ، وزٹ ویزہ، ٹرانزٹ ویزہ اور ورک ویزہ بھی شامل ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

مینو