پاکستان میں 10 سال اکاؤنٹنسی کے پیشے کے لیے تابناک

اے سی سی اے اور آئی ایف اے سی نے اکاؤنٹنسی کے شعبے سے وابستہ جنریشن زیڈکے پیشہ ور افراد کے لیے آئندہ دہائی کو تابناک قرار دے دیا ہے۔

’’گراؤنڈ بریکرز جنریشن زیڈ اینڈ دی فیوچر آف اکاؤنٹنسی‘‘ پرمرتب کردہ ایک رپورٹ میں دی ایسوسی ایشن آف چارٹرڈ سرٹیفائیڈ اکاؤنٹنٹس (اے سی سی اے) اور انٹرنیشنل فیڈریشن آف اکاؤنٹنٹس (آئی ایف اے سی) نے اکاؤنٹنسی کے شعبے سے وابستہ جنریشن زیڈکے پیشہ ور افراد اور ان کے آجرین کے لیے آئندہ دہائی کو تابناک اور مواقع سے بھر پور قرار دیا ہے۔

اے سی سی اے اورآئی ایف اے سی کی جاری کردہ حالیہ رپورٹ ایک سروے پر مشتمل ہے جس میں 495 پاکستانی اکاونٹنٹس سمیت دنیا بھر کے اٹھارہ سے 25 سال عمر کے 9 ہزار سے زائد نوجوانوں نے حصہ لیا۔

سروے کے مطابق 58 فیصد پاکستانی سمجھتے ہیں کہ اکاونٹینسی کا مستقبل روشن اور کیریئر کے پرکشش مواقع فراہم کرتی ہے۔ 61 فیصدکے مطابق ملازمت کے مواقع کم یا غیر محفوظ ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

مینو