پاکستان، سعودی عرب میں 50 کروڑ ڈالر قرض کا معاہدہ جلد ہونے کا امکان

پاکستان اور سعودی عرب کے درمیان 50 کروڑ ڈالر مالیت کے نئے قرض کے لیے معاہدہ ہونے کا امکان ہے۔

پاکستان سعودی عرب سے 50 کروڑ ڈالر مالیت کا نیا قرض لے گا اور اس سلسلے میں دونوں ممالک کے درمیان وزیر اعظم عمران خان کے دورہ سعودی عرب کے موقع پر مفاہمت کی یادداشت پر دستخط ہونے کا امکان ہے۔

اس سلسلے میں وزیر اعظم کے ایک معاون خصوصی کا کہنا ہے کہ دورے کے دوران دونوں ممالک ے درمیان پاکستان میں نئی آئل ریفائنری کے قیام کے حوالے سے بھی بات چیت کا امکان ہے تاہم 7 ارب ڈالر مالیت کے اس منصوبے پر کوئی فوری پیش رفت کا امکان نظر نہیں آتا۔

وزارت معاشی امور کے ایک اہلکار نے بتایا کہ وزیر اعظم عمران خان کے دورے سے قبل وفاقی کابینہ نے رواں ہفتے ہی پاکستان اور سعودی فنڈ برائے ترقی کے لیے مفاہمت کی یادداشت کے فرہم ورک کی منظوری دی ہے جس کے تحت سعودی فنڈ برائے ترقی مہمند ڈیم، جاگران بجلی منصوبہ، شونتر بجلی منصوبہ، جامشورو بجلی گھر، مانسہرہ فراہمی آب کا منصوبہ اور ایبٹ آباد اور مظفر آباد کے درمیان سٹرک کی تعمیر نو کے منصوبوں کے لیے طوی مدتی 50 کروڑ ڈالر مالیت کے قرض فراہم کرے گا۔

وزیر اعظم کے معاون خصوصی تابش گوہر نے بتایا کہ دورے کے دوران پاکستان کی جانب سے سعودی عرب کو نئی آئل ریفائنری پالیسی سے بھی آگاہ کیا جائے گا جس کی منظوری پیٹرولیم ڈویڑن نے حال ہی میں دی ہے اور پاکستان سعودی آرامکو کی جانب سے ڈھائی لاکھ بیرل یومیہ آئل ریفائنری کے قیام میں سرمایہ کاری کا خیرمقدم کرے گا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

مینو