وزیر اطلاعات کی صحافی اسد طور پر تشدد کا نوٹس لیتے ہوئے پولیس کو واقعے کی تحقیقات کی ہدایت

وفاقی وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے صحافی اسد طور پر تشدد کا نوٹس لے لیا۔

وزیر اطلاعات نے ایس ایس پی اسلام آباد کو اسد طور پر تشدد کے واقعے کی تحقیقات کی ہدایت کردی ہے۔

وفاقی وزیر انسانی حقوق شیریں مزاری نے بھی بتایا ہے کہ حملہ آوروں کی سی سی ٹی وی فوٹیج موجود ہے، وزیراطلاعات پولیس سے ضروری کارروائی کیلئے رابطے میں ہیں۔

مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے اسد طور پر حملے کو انتہائی تشویش ناک قرار دیا جبکہ ن لیگ کی ترجمان مریم اورنگزیب نے بھی مذمت کی اور کہا کہ حکومت صحافیوں کے تحفظ پر لیکچر دینے کے بجائے ان کا تحفظ یقینی بنائے۔

پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو نے کہا کہ جب صحافی اور آزادی اظہار حملوں کی زد میں ہوں تو حکومت کی بزدلی مزید نمایاں ہوجاتی ہے۔

جمعیت علمائے اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ اس طرح کے حملوں سے صحافیوں کی آواز کو دبایا نہیں جاسکتا۔

اُدھر نیشنل پریس کلب نے صحافی اسد طور پر حملے کی مذمت کی اور ملزمان کی فوری گرفتاری کا مطالبہ کیا۔

خیال رہے کہ گزشتہ شب اسلام آباد میں نامعلوم افراد نے صحافی اور یوٹیوبر و بلاگر اسد طور کو گھر میں گھس کر تشدد کا نشانہ بنایا۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

مینو