کینیڈا کا چھوٹے آتشیں اسلحے کی خریدو فروخت پر مکمل پابندی کا فیصلہ

کینیڈا کے وزیراعظم جسٹن ٹروڈو / اے ایف پی فوٹو
کینیڈا کے وزیراعظم جسٹن ٹروڈو / اے ایف پی فوٹو

کینیڈا میں چھوٹے آتشیں اسلحے کی خرید و فروخت کو مکمل طور پر روکنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

کینیڈا کے وزیراعظم جسٹن ٹروڈو نے اعلان کیا ہے کہ حکومت کی جانب سے نئی قانون سازی متعارف کرائی جارہی ہے جس کے تحت اسلحے کی ملکیت کے حوالے سے قوانین کو سخت کیا جائے گا۔

انہوں نے مزید بتایا کہ قانون سازی کے بعد کینیڈا میں کہیں بھی چھوٹے آتشیں اسلحے کو خریدنا، بیچنا، منتقل یا درآمد کرنا ممکن نہیں رہے گا، البتہ جن کے پاس ابھی چھوٹا اسلحہ موجود ہے وہ اسے رکھ سکیں گے۔

انہوں نے کہا اسلحے کے استعمال اور پرتشدد واقعات میں اضافہ ہورہاہے، ہتھیار جتنے کم ہوں گے ہر شخص اتنا ہی محفوظ ہوگا۔

مجوزہ قانون میں اسلحے کی اسمگلنگ اور ٹریفکنگ پر بھی سزاؤں کو بڑھایا جائے گا جبکہ سرحدی کنٹرول کو مضبوط کیا جائے گا۔

اسی طرح گھریلو تشدد یا ہراساں کرنے کی تاریخ رکھنے والے افراد کے اسلحہ لائسنس منسوخ کیے جائیں گے۔

یہ قانون جسٹن ٹروڈو کی جماعت لبرل پارٹی کا تجویز کردہ ہے جس کے جلد منظور ہونے کا امکان ہے۔

اس سے قبل 2020 میں کینیڈین حکومت نے فوجی انداز کی 15 سو سے زیادہ رائفل کی اقسام پر پابندی عائد کی تھی۔

کینیڈا میں یہ نئی قانون سازی اس وقت کی جارہی ہے جب اس کے پڑوسی ملک امریکا میں اسکولوں میں فائرنگ کے واقعات کی شرح بڑھی ہے جس کے بعد گن کنٹرول کی بحث میں شدت آئی ہے۔