طلاق کے بڑھتے ہوئے رجحان کو کم کرنےکا حل

چین نے ملک میں طلاق کے بڑھتے ہوئے رجحان کو کم کرنے کا حل نکال لیا ہے۔

چین میں کسی جوڑے کی جانب سے طلاق کی درخواست دائر کرنے کے بعد انہیں ایک ماہ ایک ساتھ رہ کر فیصلے پر نظرثانی کی ہدایت کی جاتی ہے. جس کے حیرت انگیز نتائج سامنے آرہے ہیں۔

نئی حکمت عملی کے باعث، چین میں طلاق کی شرح 72 فیصد تک کم ہوگئی ہے۔

واضح رہے کہ چین میں حالیہ برسوں کے دوران طلاق کی شرح میں اضافہ ہوا تھا، صرف گذشتہ سال کی آخری سہ ماہی میں دس لاکھ 10 ہزار طلاقیں رجسٹرڈ ہوئیں تھیں۔

قران مجید میں چودہ صدیاں قبل یہی طریقہ تعلیم کر دیا گیا تھا کہ مرد ایک طلاق دے اور ایک ماہ تک خاتون اسی گھر میں رہے. اگر الگ ہونے کے فیصلے کو ترک کر دیں تو رجوع کرلیں. اگر پھر بھی دونوں کا فیصلہ ہو کہ نباہ نہیں ہوسکتا تو مرد دوسری طلاق دے اور مزید ایک ماہ بدستور گزاریں. اگر نباہ ہوسکنے کے امکانات ہوں تو رجوع کر لیں ورنہ الگ ہو جائیں.

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

مینو