سندھ مدرستہ یونیورسٹی کے وائس چانسلر کیلئے 3 نام وزیر اعلیٰ کو ارسال

بانی پاکستان قائداعظم محمد علی جناح کی ابتدائی درسگاہ سندھ مدرستہ الاسلام یونیورسٹی میں وائس چانسلر کے تقرر کے سلسلے میں انٹرویوز کے بعد تین موزوں امیدواروں کے ناموں کا انتخاب کرلیا گیا ہے۔

وزیر اعلیٰ سندھ تین امیدواروں میں سے کسی ایک امیدوار کا انتخاب بطور وائس چانسلر کریں گے، وائس چانسلر کے انتخاب کے لیے قائم تلاش کمیٹی کی جانب سے 11 امیدواروں کے نام انٹرویوز کے لیے شارٹ لسٹ کیے گئے تھے جن میں سندھ کی 5 مختلف سرکاری جامعات کے موجودہ وائس چانسلرز بھی شامل تھے۔

تلاش کمیٹی کے ذرائع کے مطابق ان 5 وائس چانسلرز میں سے 4 سندھ مدرستہ الاسلام یونیورسٹی کے وائس چانسلر کے عہدے کی دوڑ سے باہر ہوگئے ہیں اوربصرف زرعی یونیورسٹی ٹنڈو جام کے وائس چانسلر ڈاکٹر مجیب الدین ان تین امیدواروں میں شامل ہوسکے ہیں جن کے نام بطور موزوں امیدوار کنٹرولنگ اتھارٹی وزیر اعلی سندھ کو بھجوائے جارہے ہیں دیگر دو امیدواروں میں پروفیسر سرفراز سولنگی اور پروفیسر نبی بخش جمانی شامل ہیں۔

یاد رہے کہ امیدواروں میں دیگر چار جامعات کے وائس چانسلرز میں سندھ مدرستہ الاسلام یونیورسٹی کے موجودہ قائم مقام وائس چانسلر ڈاکٹر محمد علی شیخ، سکھر یونیورسٹی کی قائم مقام وائس چانسلر ڈاکٹر ثمرین حسین، لیاری یونیورسٹی(شہید بینظیر بھٹو) کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر اختر بلوچ اور سندھ یونیورسٹی جامشورو کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر فتح برفت شامل تھے جبکہ اس عہدے کے لیے اصل مقابلہ ڈاکٹر محمد علی شیخ اور ڈاکٹر ثمرین حسین کے مابین تھا تاہم اطلاع ہے کہ تلاش کمیٹی تین نے منتخب امیدواروں میں دونوں کے نام ہی شامل نہیں کیے۔

واضح رہے کہ اب وزیر اعلی سندھ منتخب تین امیدواروں میں سے کسی ایک امیدوار کا بطور وائس چانسلر تقرر کریں گے تاہم کنٹرولنگ اتھارٹی کو یہ اختیار بھی ہے کہ وہ بھجوائے گئے ناموں سے اختلاف کرکے سمری واپس بھجوادے۔

یاد رہے کہ یہ منگل کو منعقدہ انٹرویوز اسکروٹنی کے عمل کے تقریبا ڈیڑھ ماہ بعد ہوئے ہیں شارٹ لسٹنگ کے لیے اسکروٹنی 23 جون کو ہوئی تھی سندھ مدرستہ الاسلام یونیورسٹی میں وائس چانسلرز کے عہدے کے لیے کل 29 امیدواروں نے درخواستیں دی تھیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

مینو