رمضان، شب قدر اور عیدالاضحی کی تاریخوں کے تخمینے

عبدالرحمٰن صیفوری کی کتاب “منتخب النفائس” میں لکھا ہے کہ سیدنا جعفر صادقؒ نے فرمایا کہ موجودہ رمضان کی پانچویں تاریخ جس دن ہو، آنے والے رمضان کی پہلی تاریخ اُسی دن ہو گی۔۔ تجربے سے یہ بات درست نکلی۔۔ اسی کتاب میں لکھا ہے کہ حضرت ابوالحسن خرقانیؒ فرماتے ہیں کہ جب سے میں بالغ ہوا، ذیل کے حساب سے کبھی میری شبِ قدر فوت نہیں ہوئی؛
1۔ پہلا روزہ سوموار کا ہو تو شبِ قدر اکیس کو ہوتی ہے۔
2۔ پہلا روزہ منگل یا جمعہ کا ہو تو شبِ قدر ستائیس کو ہوتی ہے۔
3۔ پہلا روزہ بدھ یا اتوار کا ہو تو شبِ قدر انتیس کو ہوتی ہے۔
4۔ پہلا روزہ ہفتے کا ہو تو شبِ قدر تئیس کو ہوتی ہے۔
5۔ پہلا روزہ جمعرات کا ہو تو شبِ قدر پچیس کو ہوتی ہے۔


1۔ عرب میں کہا جاتا ہے کہ “یوم صومکم یوم نحرکم” (تمہارے رمضان کا پہلا دن عید الاضحیٰ کا دن ہو گا)۔۔ یعنی اگر پہلا روزہ جمعرات کا ہو تو دس ذی الحجہ بھی جمعرات کو ہو گی۔
2۔ جس دن شوال کی یکم تاریخ ہوگی اسی دن یوم عاشورہ (دس محرم) ہو گا۔
3۔ گزشتہ رمضان کی پانچویں تاریخ جس روز ہو گی، آئندہ رمضان کی پہلی تاریخ اُسی دن کو ہو گی۔۔!!
۔
محمد نعمان بخاری

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

مینو