آزاد کشمیر کی پہلی خاتون پائلٹ کون ہیں؟

مریم مجتبیٰ کا تعلق آزاد جموں کشمیر سے ہے جنہوں نے پہلی خاتون کمرشل پائلٹ ہونے کا اعزاز اپنے نام کر لیا ہے۔

مریم مجتبیٰ نے بتایا کہ انہیں بچپن سے ہی جہاز اڑانے کا بے حد شوق تھا اور وہ ہمیشہ سے ہی اس شعبے سے وابستہ ہونے کا ارادہ رکھتی تھیں۔

انٹرویو کے دوران انہوں نے بتایا کہ میرا پائلٹ بننے تک کا سفر قطعی آسان نہیں تھا لیکن خوش قسمتی سے چیزیں اچھی ہوئیں اور میرے حق میں سب بہتر ہوا۔ مریم نے اس خواب کو پورا کرنے کا سہرا اپنی فیملی، دوستوں اور اساتذہ کے سر سجایا۔

مریم سے اس شعبے میں مردوں اور خواتین کے مابین تفریق کے حوالے سے سوال کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ مجھے اس قسم کی مشکل کا کبھی سامنا نہیں کرنا پڑا بلکہ ہر جگہ میری پذیرائی ہوئی۔

مریم مجتبیٰ نے اپنی آئیڈیل کے بارے میں بتاتے ہوئے کہا کہ میں بچپن سے ہی پی آئی کی کپتان عائشہ رابعہ سے متاثر تھی، جب چھوٹی تھی تو ایک خاتون کو جہاز اڑاتے دیکھ کر کافی پر جوش ہوئی اور اپنے والد سے پوچھا کہ لڑکیاں بھی ہوائی جہاز اڑا سکتی ہیں؟

خاتون پائلٹ نے اس شعبے میں آنے والی نئی لڑکیوں اور دیگر خواتین کو یہ پیغام بھی دیا کہ اگر آپ کسی بھی شعبے سے حقیقتاً وابستہ ہونا چاہتی ہیں تو خود پر مکمل اعتماد رکھیں، یہی کامیابی کی کنجی ہے۔

واضح رہے مریم 2011ء میں بطور کیڈٹ پائلٹ پی آئی اے میں شامل ہوئیں، راولپنڈی اور امریکا کی اکیڈمیوں سے اپنی تربیت حاصل کرنے کے بعد انہوں نے مختلف علاقائی پروازوں کے ذریعے اپنی اڑان کے مخصوص اوقات مکمل کیے۔

اوقات کار مکمل کرنے پر حال ہی میں فرسٹ افسر کے طور پر ترقی دی گئی تھی۔ مریم مجتبیٰ اس وقت دنیا کے مختلف ممالک میں پی آئی اے ائیر اے 320 کو چلاتی ہیں۔

شاید آپ یہ بھی پسند کریں

مینو